Ghazal

غــــزل

دل جلا کر روشنی کرتا ہوں میں

یوں اندھیرے میں کمی کرتا ہوں میں

میرے پیچھے چل رہے ہیں حادثے

کیوں کہ اِن کی رہبری کرتا ہوں میں

جس کے آگے فطرتاً جھکتا ہے سر

اُس خدا کی بندگی کرتا ہوں میں

جو زباں رکھ کر بھی کچھ کہتے نہیں

اُن کی خاطر شاعری کرتا ہوں میں

میرا مقصد ہے روایت توڑنا!

شعر کہتا کام بھی کرتا ہوں میں

میری عادت ہے زمانے سے الگ

دشمنوں سے دوستی کرتا ہوں میں

ماں کی خدمت کر نہیں سکتا تو پھر

آرزو کیوں خُلد کی کرتا ہوں میں

نام ہے رانجھا، محبت کام ہے

ہیر کے گھر نوکری کرتا ہوں میں

اس قدر ہمت ہے کس میں حافظمؔ

اپنے غم سے دل لگی کرتا ہوں میں

شیئر کیجیے
Default image
حافظؔ کرناٹکی

تبصرہ کیجیے