2

حمد

مرے بس میں تعریف تیری کہاں ہے

اکیلا تُوہی ربِّ کون ومکاں ہے

ہراک شئے بنی ہے بس اک تیرے کُن سے

تری آب و گل میں بھی قدرت عیاں ہے

زمین آسماں کیا؟ شجر کیا؟ حجر؟

ہر اک ذرّے ذرّے میں تو ہی نہاں ہے

ہراک شئے ہے فانی تو واحدہے باقی

نہیںتیرا ثانی تو ہی جاوداں ہے

رحم کراب اس کاعقیدہ بدل دے

یہ دنیا تری کیوں اسیرِ بتاں ہے

جوراضی کرے تجھ کو جنت وہ پائے

وہاں ابتلا اورنہ آہ و فغاں ہے

تری حمددانش ؔبیاں کر نہ پائے

نہ عاشق وہ ویسانہ رطبُ الّساں ہے

شیئر کیجیے
Default image
ایو ب بیگ دانش

تبصرہ کیجیے