غزل

ماہ و خورشید اک طرف اور تیرا جلوہ اک طرف

اک طرف ہے ساری دنیا، حسن تیرا اک طرف

تیرے احسانوں کا ہے مجھ پر طویل اک سلسلہ

درد بخشا اک طرف، اس کا مداوا اک طرف

ظلم یوں ہوتا ہے رسوا، اس جہاں میں دوستو

اک طرف فرعون ہے، دریا میں رستا اک طرف

حریت کے نام پر مجھ کو فقط اتنا ملا

اک طرف قدغن سخن پر، دل پہ پہرا اک طرف

ایک سے بڑھ کر یقینا ہے موثر دوسرا

ہے تکلم اک طرف، اشکوں کا بہنا اک طرف

کشمکش میں ہے ہ انساں جائے تو جائے کدھر

اک طرف اس کے ہے دنیا اور عقبیٰ اک طرف

اپنے موقف سے کبھی تنویر ہٹ سکتا نہیں

ساری دنیا اک طرف اور حکم مولیٰ اک طرف

شیئر کیجیے
Default image
تنویر آفاقی

Leave a Reply