سرد موسم اور بچوں کی صحت

موسم سرما کا آغاز ہوچکا ہے۔ سرد موسم اکثر بچوں کے لیے خاصی زحمت کا باعث بن جاتا ہے۔ نزلہ، زکام، گلے کی خراش، نمونیہ، بخار وغیرہ اس موسم کی دین ہیں۔ ان سے بچاؤ کی تدابیر اختیار کرلیں تو آپ کے نونہال بیمار ہونے سے بچے رہیں گے۔ دراصل اپنی ناتواں قوت مدافعت کے باعث نوزائیدہ بچے موسمی سختی برداشت نہیں کر پاتے اور ماحول اور آب و ہوا کی تبدیلی سے بہت متاثر ہو جاتے ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ ناسمجھی کے باعث انہیں احتیاطی تدابیر کا بھی زیادہ شعور نہیں ہوتا اور وہ نتائج سے بے پروا ہوکر اپنے کاموں میں مگن رہتے ہیں، لہٰذا سردیوں میں ان کا متاثر ہونا کوئی اچنبھے کی بات نہیں۔ ایسے میں اکثر مائیں موسم کو الزام دیتی نظر آتی ہیں جو کہ نہایت عجیب امر ہے، کیوںکہ بچے تو ٹھہرے بچے، وہ کیوں کر موسم اور اس سے بچاؤ کی احتیاطی تدابیر کو سمجھ سکتے ہیں؟ یہ کام تو ہے ہی سراسر ان کی ماؤں کا کہ وہ خود بھی احتیاط کریں اور انہیں احتیاط سکھائیں۔ اگر سرد موسم کے شروع ہوتے ہی بچوں کو مناسب گرم کپڑے پہنائے جائیں، انہیں پانی میں کھیلنے سے دور رکھا جائے، ٹھنڈے پانی سے ہاتھ منہ دھونے اور بے وقت نہانے سے روکا جائے، چاکلیٹ اور غیر معیاری ٹافیوں اور مٹھائیوں سے دور رکھا جائے تو بچے سینے کی جکڑن، سانس کی تکلیف، نزلہ، گلے کی خرابی یا گلے کے غدود میں سوجن کی شکایت سے محفوظ رہ سکتے ہیں۔

سردی کے موسم میں نوزائیدہ بچوں کے پاؤں، سینے اور خاص طور پر سر کو گرم رہنا چاہیے۔ شیر خوار اور کم از کم پانچ برس تک کے بچوں کے سر اور سینے کو ڈھانپ کر رکھیں لیکن اس کا مطلب یہ نہیں کہ پانچ برس سے بڑے بچوں کو گرم کپڑے نہ پہنائے جائیں اور ان کو سرد ہوا کے جھونکوں کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا جائے، احتیاط سب کے لیے ضروری ہے۔ ماہرین طب کا کہنا ہے کہ انسانی جسم کی چالیس فیصد حرارت یا سردی سر کے راستے داخل ہوتی ہے اس لیے محتاط رہیں۔ موسم کی سختی کے حساب سے بچوں کے سر پر اونی ٹوپی اور پاؤں میں موزے پہنانے کے ساتھ ساتھ سینہ بند یا کوئی ہاف سوئٹر کپڑوں کے اندر پہنائیں۔ ہائی نیک سوئٹر پہنانا بھی مفید رہے گا۔ گرم کپڑے پہناتے وقت موسم کی شدت کا درست اندازہ کریں اور اسی حساب سے کپڑے پہنائیں۔ ایسا نہ ہو کہ موسم کی شدت سے زیادہ بھاری کپڑے پہنا دیے جائیں، جس سے بچہ گھبرا جائے۔

پانی کی بے احتیاطی سے عام طور پر بچوں کی قوت مدافعت کم زور پڑ جاتی ہے اور وہ نزلے زکام اور نمونیے کا شکار ہوجاتے ہیں۔ نمونیے کی صورت میں ان کے پھیپھڑے بری طرح متاثر ہوتے ہیں، جس کی وجہ سے پسلیاں چلنے لگتی ہیں، تیز بخار ہو جاتا ہے اور بچہ سانس لینے میں دقت محسوس کرتا ہے۔ نمونیے کی صورت میں فوری طور پر معالج سے رجوع کیا جائے، کیوں کہ ہمارے ملک میں بچوں کی اموات کی بڑی وجہ نمونیہ بھی ہے۔ اس لیے بہتر ہے کہ اپنے بچوں کو پہلے ہی نمونیے سے بچاؤ کے ٹیکے لگوا لیں۔ بحیثیت ماں آپ کو اس بیماری کی علامات بھی معلوم ہونی چاہئیں تاکہ بروقت تشخیص اور دوادی جاسکے۔ ماہرین کے مطابق جب بچہ کراہنا شروع کرے تو والدین کو چاہیے کہ فوری توجہ دیں، جب کہ سانس لینے میں سیٹی کی آواز نکلنا، پسلی چلنا، بچے کا نڈھال ہونا، بخار، نزلہ اور کھانسی کے ساتھ جھٹکے لگنا شدید نمونیے کی علامات ہیں، ایسی کیفیت میں ہنگامی طور پر مستند ڈاکٹر سے رجوع کریں اور بچے کو حرارت پہنچائیں۔ ضرورت ہو تو کمرے میں گرمی کا انتظام کریں، لیکن یہ بھی دھیان رکھیں کہ کمرے میں ہوا کی آمد و رفعت میں رکاوٹ پیدا نہیں ہونی چاہیے۔ اگر بچے کو پاؤڈر کا دودھ دیا جارہا ہے تو ہر بار بوتل کو گرم پانی سے اچھی طرح دھوئیں۔ سردی سے نارمل بخار ہونے کی صورت میں خود سے اینٹی بایوٹک دینے سے گریز کریں۔ بچے کو بخار سے سردی لگ رہی ہو اور وہ کانپنے لگے تو اسے روئی کا بنولہ نا بنائیں بلکہ ذرا ڈھیلے کپڑے پہنائیں۔ اکثر مائیں بچوں کو بخار میں گرم کپڑوں سے سر سے پیر تک ڈھانپ دیتی ہیں، جس سے بعض اوقات ان کی حرارت معمول سے بھی بڑھ جاتی ہے۔ بخار کی صورت میں بچے کو سوپ اور یخنی دیں۔ وقفے وقفے سے بچے کا درجہ حرارت نوٹ کرتی رہیں اور بخار بڑھنے کی صورت میں معالج سے ضرور رجوع کریں۔

بچوںمیں سردی کی وجہ سے نزلہ اور گلے میں خراش کی شکایت بھی ہوتی ہے۔ نزلہ بظاہر معمولی نظر آتا ہے مگر اس کی وجہ سے ناک میں ورم کے باعث سانس لینا دشوار ہو جاتا ہے۔ زکام میں گرم پانی پینا مفید ہے۔ شیر خوار بچوں کو دودھ میں دو پیپل کے پتے، دو چھوہارے، چار کھجوریں، ان میں سے کوئی ایک چیز دودھ میں ابال کر پلائیں۔ ادرک کا رس اور شہد مکس کر کے چٹائیں، گاجر پالک کا رس پلائیں، موسمی پھلوں کا رس پلائیں، چنے ابال کر ان کا پانی پلائیں، سونٹھ اور گڑ پانی میں دال کر ابال لیں اور وقفے وقفے سے پلائیں، جائفل کو پانی میں گھس کر شہد میں ملا کر صبح و شام چٹانے سے زکام وغیرہ کی شکایات دور ہوجاتی ہیں۔ ٹھوس غذا کھانے والے بچوں کو زکام میں گڑ اور سیاہ تل کے لڈو کھلائیں، چائے اور جوشاندہ پلائیں۔ منقہ، امرود اور کچا پیاز کھانے سے بھی زکام ٹھیک ہو جاتا ہے۔ بچوں کو سرسوں یا زیتون کے تیل کی مالش کر کے دھوپ میں لٹائیں یا بٹھائیں۔ مناسب احتیاط اور تدابیر اختیار کر کے ہم اپنے بچوں کو سردی کے امراض اور تکلیف سے محفوظ رکھ سکتے ہیں۔ بچے کے سینے کو ٹھنڈ لگ جانے کی صورت میں پرانی روئی گرم کر کے سینکیں، سینے پر تارپین کا تیل یا معیاری بام مالش کریں۔

نظام تنفس کی تکالیف کے سلسلے میں یہ بہت ضروری ہے کہ بچے کا پیٹ صاف رہے یعنی وہ قبض میں مبتلا نہ ہو۔ اسے دور کرنے کے لیے دس دانے منقہ ایک دو خشک انجیر وغیرہ کا استعمال کافی ہوتا ہے۔ بچہ چھوٹا ہو تو کیسٹر آئل دینا بھی مفید ہوگا۔ نوزائیدہ بچے کو اجوائن اور ہریڑ گھس کر نیم گرم دودھ میں یا گھٹی کی صورت میں پلائیں۔ بچے کا گلا خراب ہونے کی صورت میں ذرا سی گلیسرین، شہد ایک کپ دودھ میں ملاکر پینے سے افاقہ ہوگا۔ قبض کی صورت میں اسپغول پانی کے ساتھ پلائیں۔ چھینکوں کی صورت میں روغن گل دو تین قطرے کان اور ناک میں ڈالیں۔ پسلی چلنے کی صورت میں بارہ گرام لہسن کچل کر اس کا پانی نکال لیں اور شہد میں مکس کر کے چٹائیں تو افاقہ ہوگا۔

چھوٹے بچوں کو کھانسی ہو تو چھوٹی الائچی پیس کر چٹا دیں۔ ایک سیپ پیس کر ایک صاف رومال میں رکھ کر اس کا پانی نچوڑ لیں اور اس میں تھوڑی سی مصری ملا کر صبح و شام پلائیں۔ ابلے ہوئے انڈے کی زردی اسے شہد میں ملا کر کھلائیں، اس عمل سے سخت سے سخت کھانسی میں بھی آرام آجائے گا۔ ادرک کے رس میں شہد ملا کر چٹائیں کھانسی دور ہوجائے گی۔ اگر مائیں مندرجہ بالا احتیاطی تدابیر ملحوظ خاطر رکھیں ارو علاج کریں تو سردیوں کا موسم بخیر و عافیت گزر جائے گا۔lll

شیئر کیجیے
Default image
ڈاکٹر کاملہ مبشر

Leave a Reply