5

غزل

نہیں آتا قفس کو آشیاں کہنا نہیں آتا

کسی رہزن کو میرِ کارواں کہنا نہیں آتا

کسی نامہرباں کو مہرباں کہنا نہیں آتا

جو کہلاتا ہے میرِ کارواں کہنا نہیں آتا

قفس میں پھول، پھولوں میں لہو، دامن میں تصویریں

مجھے کیا مختصر سی داستاں کہنا نہیں آتا؟

خلوصِ دوستاں کا اب یہ عالم ہے کہ دنیا میں

کسی کو بھی کسی کی داستاں کہنا نہیں آتا

خیالؔ اِک شاعر مزدور و دہقاں ہے مگر پھر بھی

اسے فاقہ کشوں کی داستاں کہنا نہیں آتا

شیئر کیجیے
Default image
خیالؔ مینائی

تبصرہ کیجیے