کھانے پینے کے آداب

کھانے سے پہلے ہاتھ دھولیجیے۔ طہارت اور نفاست کا تقاضا ہے کہ کھانے میں پڑنے والے ہاتھوں کی طرف سے طبیعت مطمئن ہو۔

٭ بسم اللّٰہ وعلی برکۃ اللّٰہ پڑھ کر کھانا شروع کیجیے اور اگر بھول جائیں تو یاد آنے پر بسم اللّٰہ اولہ و آخرہ کہہ لیجیے۔ یاد رکھئے کہ جس کھانے پر خدا کا نام نہیں لیا جاتا اس کو شیطان اپنے لیے جائز کرلیتا ہے۔

٭کھانے کے لیے ٹیک لگا کر نہ بیٹھیے خاکساری کے ساتھ اکڑوں یا دوزانو ہوکر بیٹھیے یا ایک گھٹنا بچھا کر اور ایک کھڑا کرکے بیٹھیے۔ خدا کے رسول اسی طرح بیٹھتے تھے۔

٭ہمیشہ سیدھے ہاتھ سے کھائیے ضرورت پڑنے پر بائیں ہاتھ سے بھی مدد لے سکتے ہیں۔

٭تین انگلیوں سے کھائیے اور اگر ضرورت ہو تو چھنگلی چھوڑ کر چار انگلیوں سے کام لیجیے اور انگلیاں جڑوں تک آلودہ کرنے سے پرہیز کیجیے۔

٭نوالہ نہ زیادہ بڑا لیجیے اور نہ چھوٹا اور ایک نوالہ نگلنے کے بعد ہی دوسرانوالہ منہ میں دیجیے۔

٭روٹی سے انگلیاں ہرگز صاف نہ کیجیے۔ یہ بڑی گھناؤنی عادت ہے۔

٭روٹیوں کو جھاڑنے اور پٹخنے سے بھی پرہیز کیجیے۔ پلیٹ میں اپنی طرف سے کنارے سے کھائیے، نہ بیچ میں ہاتھ ڈالیے اور نہ دوسروں کی طرف سے کھائیے۔

٭نوالہ گر جائے تو اٹھا کر صاف کرلیجیے یا دھولیجیے اور کھالیجیے۔

٭کھانا مل جل کر کھائیے مل جل کر کھانے سے الف و محبت بھی پیدا ہوتی ہے اور برکت بھی۔

٭کھانے میں کبھی عیب نہ نکالیے پسند نہ ہوتو چھوڑ دیجیے۔ بہت گرم جلتا ہوا کھانا نہ کھائیے۔

٭کھانے کے دوران ٹھٹھا مار نے اور بہت زیادہ باتیں کرنے سے پرہیز کیجیے۔

٭بلا ضرورت کھانے کو نہ سونگھئے کھانے کے دوران بار بار اس طرح منہ کھولیے کہ چبتا ہوا کھانا نظر آئے اور نہ بار بار منہ میں انگلی ڈال کر دانتوں سے کچھ نکالیے اس سے دسترخوان پربیٹھنے والوں کو گھن آتی ہے۔

٭کھانا بھی بیٹھ کر کھائیے اور پانی بھی بیٹھے کر پیجئے۔ البتہ ضرورت پڑنے پر پھل وغیرہ کھڑے ہوکر کھاسکتے ہیں اور پانی بھی پی سکتے ہیں۔

٭پلیٹ میں جو کچھ رہ جائے اگر رقیق ہو تو پی لیجیے ورنہ انگلی سے چاٹ کر پلیٹ صاف کرلیجیے۔

٭کھانے پینے کی چیزوں پر پھونک نہ مارئیے اندر سے آنے والی سانس زہریلی اور گندی ہوتی ہے۔

٭پانی تین سانس میں ٹھہر ٹھہر کی پیجئے اس سے پانی بھی ضرورت کے مطابق پیا جاتا ہے اور آسودگی بھی ہوجاتی ہے۔ اور یکبارگی پورے برتن کا پانی پیٹ میں انڈیل لینے سے کبھی کبھی تکلیف بھی ہوجاتی ہے۔ اجتماعی کھانے میں دیر تک کھانے والوں اور آہستہ کھانے والوں کی رعایت کیجیے اور سب کے ساتھ اٹھئے۔

٭کھانے سے فارغ ہوکر انگلیاں چاٹ لیجیے اور پھر ہاتھ دھولیجیے، پھل وغیرہ کھارہے ہوں تو ایک ساتھ دو عدد یا دو دو قاشیں نہ اٹھائیے۔

٭لوٹے کی ٹوٹی ہوئی صراحی یا اسی طرح کی دوسری چیزوں سے پانی نہ پیجئے ایسے برتن میں پانی لے کر پئیں جس میں پیتے وقت منہ میں جانے والا پانی نظر آئے تاکہ کوئی گندگی یا مضر چیز پیٹ میں نہ جائے۔ کھانے سے فارغ ہوکر یہ دعا پڑھئے:

اَلْحَمْدُلِلّٰہِ الَّذِیْ اَطْعَمَنَا وَسَقَانَا وَجَعَلَنَا مِنَ الْمُسْلِمِیْنَ

ترجمہ: حمدو ثنا اس خدا کے لیے جس نے ہمیں کھلایا اور جس نے ہمیں پلایا اور جس نے ہمیں مسلمانوں میں بنایا۔‘‘

(آدابِ زندگی سے ماخوذ)

شیئر کیجیے
Default image
مرسلہ: عصمت عمر

Leave a Reply