’’بدل ڈالوں‘‘

یہ چاہتی ہوں زمین و زماں بدل ڈالوں

صدائے حق سے فضائے جہاں بدل ڈالوں

دلوں پہ غلبۂ تہذیب غیر ہے اب تک

تخیلاتِ عبث کا سماں بدل ڈالو

قلم ہنوز رہینِ شکوہ و شان عجم

زبانِ سادہ سے طرزِ بیاں بدل ڈالوں

رواں ہے جانب موہوم کاروانِ حیات

یقینِ دل سے میں وہم و گماں بدل ڈالوں

فضیلتوں سے طبیعت جہاں گریزاں ہو

میں اس مقام کا نام و نشان بدل ڈالوں

بنا ہے صوفی و ملا کی داستاں اسلام

جو بس چلے تو یہ سب داستاں بدل ڈالوں

دروغ، بوالہوسی و تبرجِ زینت

اٹھوں میں رسمِ حیاتِ زناں بدل ڈالوں

قدم قدم پہ ہواؤ ہوس کے ہیں مسکن

وطن کی گمرہی بے کراں بدل ڈالوں

فضا میں گونج اٹھے میرا نغمۂ توحید

اے ساجدہؔ میں شکوہ بتاں بدل ڈالوں

شیئر کیجیے
Default image
ساجدہؔ بیگم

Leave a Reply