پسندیدہ اشعار

دھماکے زلزلے طوفان پیہم

اور اس کے بعد یہ دنیا جہنم

یہی انسانیت کی انتہا ہے

’’مگر انساں ترقی کررہا ہے‘‘

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نسرین خاتون، میرٹھ

یہ کیوں انسانیت پر سرخ چادر

گلابوں کی طرح پھیلی ہوئی ہے

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سراج الدین، بھوکردن

تنہا تنہا گھوم رہی ہے یارو کیوں

انسانوں کی بستی میں انسانیت

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مدیحہ اختر، بیدر

سوچو کبھی اے دوست کبھی غور بھی کرو

انسان کا قتل اصل ہے انسانیت قتل

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مشیر اصغر، دربھنگہ

انسانیت کی چیخ پہ ہنستے ہیں سنگ دل

اور ایک میں ہوں قوت گویائی کھوگئی

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نائلہ ، نئی دہلی

ثبوتِ عظمتِ انسانیت ہیں

محمد مصطفی انسان کامل

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فضل الرحمن رشید، گرمٹکال

منتشر پھر ہوگیا انسانیت کا قافلہ

ڈھونڈ کر پھر لائیے نقشِ کفِ پائے رسولؐ

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شائستہ جبیں ، گرمٹکال

تہذیب نو کے دور میں انسانیت کے ساتھ

انسان نے کیا سلوک کیا دیکھتے چلیں

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بدریہ حسین، رام پور

دور ہوتی جارہی ہے منزل انسانیت

جانے یہ دنیا ہے کس کافر کی بھٹکائی ہوئی

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وحید قیصر، بلاس پور

یا رب مجھے تو مال دے نہ تخت و تاج دے

انسانیت کا درد مرے دل میں ڈال دے

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نکہت فاطمہ، تاجپور

چند فرضی لیکروں کو سجدہ نہ کر چند خاکی حدوں کا پجاری نہ بن

آدمیت ہے اک موجۂ بے کراں سادی دنیا ہے انسانیت کا وطن

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نادیہ سمن، حیدرآباد

شیئر کیجیے
Default image
شرکاء

Leave a Reply