حسن اور غذا

اپنے کھانے کا مینو بناتے وقت اگر آپ چیزوں کی غذائیت کا خیال رکھیں تو یہ آپ کی صحت کے لیے مفید ہوگا۔ ذیل میں بالوں، دانتوں،آنکھوں ، ناخنوں ا ور جلد کی خوبصورتی اور صحت کو برقرار رکھنے کے لیے منتخب غذاؤں کے مینو دیے گئے ہیں۔ چند ہفتوں کے استعمال سے نتائج یقینا حوصلہ افزا ہوں گے۔

خوبصورت بالوں کے لیے

ناشتہ

ایک ٹیبل اسپون دلیہ، چار چمچے پانی، ایک چمچہ لیموں کا عرق، ایک چائے کا چمچہ شہد، ایک گلاس دودھ، دو بغیر چھلے ہوئے سیب۔ دلیے کو رات بھر کے لیے پانی میں بھگودیں، صبح دوسری اشیاء ملائیں اور اگر آپ پسند کریں تو خشک میوہ بھی شامل کرلیں۔ یہ ناشتہ لذت اور غذائیت میں لاجواب ہے۔

دوپہر کا کھانا

دوپہر کے کھانے میں معمول کے مطابق کھانوں میں درج ذیل ڈش کا اضافہ کرلیں۔

ایک انڈے کی زردی، آدھ سیر دہی اور ایک پیالی ٹماٹر کا رس لے کر خوب پھنیٹے۔ سب اشیاء یک جان ہوجائیں تو ان میں حسبِ ذائقہ نمک ملا کر استعمال کیجیے۔

رات کا کھانا

سبزیوں کا سوپ، بکرے کے گوشت کا سالن، ٹماٹر، آلو اور کریم، چاول اور چپاتی۔

جلد کی خوبصورتی کے لیے

خشک جلد

ایک تازہ گاجر کو کچل کر اس میں ایک چائے کا چمچ زیتوں کا تیل ملائیں اور دن میں تین بار استعمال کریں۔

تیزابی جلد

تیزابی جلد وہ ہوتی ہے جس پر اگر کوئی رنگ لگائیں تو اس میں تبدیلی واقع ہوجائے۔ مثلاً بعض خواتین ہلکے گلابی رنگ کی لپ اسٹک استعمال کرتی ہیں لیکن تھوڑی دیر کے بعد اس کا رنگ گہرا گلابی یانیلا پڑجاتا ہے۔ دونوں صورتوں میں اسے تیزابی جلد کا ردعمل کہا جائے گا۔ اس شکایت کی صورت میں مندرجہ ذیل غذائیں استعمال کریں:

ٹماٹر کا رس: ہر روز ٹماٹر کا رس پئیں یا کچے ٹماٹر کھائیں۔

دہی اور ٹماٹر: ٹماٹر کا رس اور دہی ہم وزن لے کر خوب پھینٹیں، حسبِ ذائقہ نمک یا ذرا سی پسی ہوئی کالی مرچ ملا کر استعمال کریں۔

وٹامن سی کاک ٹیل: ٹماٹر اور نارنگی کا رس برابر مقدار میں ملائیں۔ اس میں ایک عدد لیموں کا عرق اور ایک چائے کا چمچہ شہد ملا کر پئیں۔

سبزیوں کا سوپ: آپ کے پاس جتنی بھی قسم کی سبزی موجو دہو، اسے چھیل کر کاٹ لیں۔ آدھا اونس مکھن برتن میں ڈال کر پگھلائیں۔ اس میں تمام سبزیاں ڈال دیں۔ ہلکی آنچ پر دس منٹ تک کے لیے پکائیں۔ پھر اس میں تقریباً تین پاؤ پانی ڈال دیں۔ اب نمک، پسی ہوئی سیاہ مرچ اور تھوڑی سی شکر ملائیں۔ جب یہ آمیزہ ابل جائے تو اتار لیں اورنتھار کر استعمال کریں۔

چکنی جلد

چکنی جلد والی خواتین بے چھنے آٹے کی روٹی اور سلاد کو اپنی روزانہ غذا کا جزو بنائیں۔

زرد جلد

فولاد کی کمی زرد جلد کا باعث ہوتی ہے۔ ایسی صورت میں اپنی غذا میں سبزیاں مثلاً پالک، شلجم، کلیجی، انڈے کی زردی وغیرہ شامل کریں۔

پھٹے ہوئے ہونٹ ہمیشہ اس بات کی نشاندہی کرتے ہیں کہ آپ کی غذا میں وٹامن بی کی کمی ہے۔ اس کو پورا کرنے کے لیے گیہوں کا دلیہ، کلیجی اور انڈے کھائیں۔

آنکھوں کے لیے

آنکھوں کے لیے ایسی غذائیں ضروری ہیں جن میں وٹامن اے افراط سے ہو۔ رس دار پھل، کم پکی ہوئی سبزیوں، مولی، گاجر، مچھلی کا تیل (کاڈلیور آئل)، انڈے کی زردی، کلیجی، مکھن، پنیر، پالک اور دوسری ہری اور زرد سبزیوں میں وٹامن اے وافر مقدار میں موجود ہوتا ہے۔

دانتوں کے لیے

سیب اور دہی کی ڈش

دو سیب دھوکر بغیر چھیلے کاٹ لیں، دہی اور شہد میں خوب اچھی طرح ملاکر کسی ٹھنڈی جگہ یا فریج میں رکھ دیجیے۔ کھانا کھانے کے بعد نوش کریں۔

نارنگیوں کی جیلی

چار نارنگیوں کا عرق اور ان کے چھلکوں کے باریک تراشے، ایک چائے کا چمچ شہد، آدھے لیموں کا رس اور اس کے چھلکے کے تراشے اور تین چائے کے چمچہ جیلیٹن۔ جیلیٹن کو گرم پانی میں حل کریں۔ اب اس میں شہد، لیموں کا رس، نارنگی کا رس اور ان کے چھلکوں کے تراشے ڈال کر اس مرکب کو ٹھنڈے پانی میں رکھے ہوئے شیشے کے جار یا چوڑے منھ کی شیشیوں میں ڈال دیں اور فریج میں جمالیں۔ جم جانے کے بعد نوش فرمائیں۔

ناخنوں کے لیے

صبح اٹھتے ہی سب سے پہلے لیموں، نارنگی وغیرہ کا رس پینے سے ناخن خوبصورت اور مضبوط ہوجاتے ہیں۔ اس رس سے کیلشیم بھی حاصل ہوتا ہے جو کہ ناخنوں کی صحت اور دلکشی کے لیے بہت ضروری ہے۔ وہ اس طرح کہ ایک انڈا اچھی طرح دھو کر رس میں ایک دو گھنٹوں کے لیے رکھ دیں۔ انڈے میں کوئی تبدیلی نہیں ہوگی، لیکن رس انڈے کے خول سے کیلشیم حاصل کرکے زیادہ عمدہ، فائدہ مند اور ذائقے دار بن جائے گا۔

عورت کے لیے فربہی کی طرح لاغری اور کمزوری بھی ایک پریشان کن عیب ہے۔ کمزور عورتوں کو ڈاکٹر سے مشورہ کرکے یہ اطمینان کرلینا چاہیے کہ وہ کسی جسمانی عارضے کا شکار تو نہیں ہیں۔ لاغری اور کمزوری موروثی بھی ہوتی ہے۔ کچھ عورتیں طبعاً بہت حساس اور زود رنج ہوتی ہیں اور یہی جلنے کڑھنے کی عادت ان کی لاغری اور کمزوری کا سبب ہوتی ہے۔ اگر آپ کا جسم کسی قسم کے عارضے کا شکار نہیں ہے اور آپ تندرست ہیں تو فکر کرنے کی ضرورت نہیں۔ آپ اپنی خوراک اور عادات میں مناسب تبدیلیاں کرکے اپنے جسم اور چہرے کو متناسب بناسکتی ہیں۔ سب سے پہلے تو یہ یاد رکھئے کہ خوشگوار عادت و مزاج اور ہنس مکھ طبیعت صحت پر آپ کی توقع سے زیادہ عمدہ اثر چھوڑتی ہے۔

جلنے اور کڑھنے کی عادت خون جلاتی ہے اور آپ کو اندر ہی اندر کھائے جاتی ہے۔ سب سے پہلے اس کی اصلاح کیجیے۔ زیادہ غوروفکر کی عادت ترک کردیجیے۔ بال کی کھال اتارنے کے بجائے ہر بات پر ٹھنڈے دل اور پرسکون اعصاب کے ساتھ غور کیجیے۔ زیادہ گہرائی میں جانے کی ضرورت نہیں، ہمیشہ زندگی کے روشن پہلوؤں پر نظر رکھئے اور ان میں سے جس قدر اور جتنی مقدار میں بھی خوشی آپ حاصل کرسکتی ہیں، حاصل کیجیے۔ زندگی کے روز مرہ واقعات و حالات کو اپنے ذہن پر مسلط نہ کیجیے بلکہ یہ سمجھئے کہ زندگی ایسے معمولات سے عبارت ہے اوران کی پیچیدگی یا الجھاؤ آپ کی ذہانت کے سامنے کوئی حقیقت نہیں رکھتی اور آپ ہرالجھن اور مشکل کا حل اپنی فہم و فراست سے دریافت کرسکتی ہیں۔ کھوئی ہوئی خوبصورتی یا جوانی یا وہ خوبصورتی یا جوانی جو آپ کے پاس کبھی تھی ہی نہیں، حاصل کرنا کوئی مشکل نہیں۔ بشرطیکہ آپ اپنے دل و دماغ پر مایوسی اور پژمردگی کا احساس طاری نہ ہونے دیں۔ نوجوانوں، بچوں، صحت مند لوگوںکی طرح زندگی کا ایک ایک لمحہ دلچسپی اور لگن سے گزارنے کی کوشش کریں۔ آپ زیادہ عمر کی ہیں تو عمر کے ہر دور میں اپنے سے کم عمر لوگوں میں دوست تلاش کرسکتی ہیں۔ ان کی صحبت میں خوشگوار وقت گزارسکتی ہیں۔

متوازن غذائیت سے بھر پور چیزوں کا استعمال کثرت سے کریں۔ ہلکی پھلکی ورزش غذا کے ہضم میں مددگار ثابت ہوگی۔ لسی، مکھن، بالائی، گوشت، قیمہ، دودھ، دہی، شہد اور پھلوں کا کثرت سے استعمال آپ کی صحت کو عمدگی سے ہمکنار کردے گا۔ ترش چیزوں سے مکمل پرہیز کریں۔ سبزیوں میں گاجر، آلو، اروی جسم کو فربہ کرنے میں مدد دیتے ہیں۔ دودھ، چاول اور مرغی اور بطخ کا گوشت بھی جسم کو موٹا کرتا ہے۔

شیئر کیجیے
Default image
ڈاکٹر سلمہ پروین

Leave a Reply