پسندیدہ اشعار

سجدوں کے عوض فردوس ملے یہ بات مجھے منظور نہیں

بے لوث عبادت کرتا ہوں، بندہ ہوں کوئی مزدور نہیں

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ثمینہ بانو، ایچوڑہ

ایک خاموش مگر سب سے خطرناک مہم

اپنے اندر سے لڑو، نفس کی چالوں سے ڈرو

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ملا بصیرت بازغہ، ہبلی

میں جانتا ہوں، مجھے خبر ہے، یہ دور ہے آگ کا سمندر

مگر غمِ حیات کا سفینہ اسی کی موجوں پہ ہے چلانا

بلا سے کروٹ نہ لیں اندھیرے، بلا سے پروا کرے نہ آندھی

مگر میرا فرضِ منصبی ہے چراغِ پیہم جلائے جانا

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حسنیٰ غزالی، پوسد

اسی انداز میں ہوتے تھے مخاطب مجھ سے

خط کسی اور کو لکھو گے تو یاد آؤں گا

میری خوشبو تمہیں کھولے گی گلابوں کی طرح

تم اگر خود سے نہ بولو گے تو یاد آؤں گا

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسماعیل معروفی، طویٰ

وہ آئے بزم میں اتنا تو میرؔ نے دیکھا

پھر اس کے بعد چراغوں میں روشنی نہ رہی

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ذاکر خان، گیا

غم ہستی کا اسد کس سے ہو جز مرگ علاج

شمع ہر رنگ میں جلی ہے سحر ہونے تک

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محمد عمران، قنوج، یوپی

انا کی جنگ میں ہم جیت تو گئے لیکن

پھر اس کے بعد بہت دیر تک اداس رہے

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صدف، بستی

مسجد تو بنادی شب بھر میں ایماں کی حرارت والوں نے

من اپنا پرانا پاپی ہے، برسوں میں نمازی بن نہ سکا

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نبیلہ کوثر، نئی دہلی

پروانے کو چراغ ہے، بلبل کو پھول بس

صدیق کے لیے ہے خدا کا رسول بس

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ انجم عالم، اناؤ، یوپی

خنجر چلے کسی پہ تڑپتے ہیں ہم امیر

سارے جہاں کا درد ہمارے جگر میں ہے

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔زیبا تبسم، بھدیہ، گیا

یہ چڑیا بھی مری بیٹی سے کتنی ملتی جلتی ہے

کہیں بھی شاخ گل دیکھے تو ڈیرا ڈال دیتی ہے

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ محمد علی، کانپور، یوپی

حسن صورت چند روزہ، حسن سیرت مستقل

اس سے خوش ہوتی ہیں نظریں، اس سے خوش ہوتا ہے دل

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ معظم بلال، ریاض، سعودی عرب

نہ لاؤ کبھی پاس گفتگو

کہ قرآں میں آیا ہے لا تقنطوا

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فائقہ پروین، کشن گنج، دہلی

گنگناتا جارہا تھا اک فقیر

دھوپ رہتی ہے نہ سایہ دیر تک

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صفیہ سنبل، بلریا گنج، اعظم گڑھ

کچھ نہ کچھ مانگا سبھی نے، ماں نے بس اتنا کہا

مجھ کو اپنی خیریت کا خط ہی بیٹا بھیجنا

مرسلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اُمینہ تنویر، دہلی

شیئر کیجیے
Default image
شرکاء

Leave a Reply