’’بدل ڈالوں‘‘

’’بدل ڈالوں‘‘

یہ چاہتی ہوں زمین و زماں بدل ڈالوں صدائے حق سے فضائے جہاں بدل ڈالوں دلوں پہ غلبۂ تہذیب غیر ہے اب تک تخیلاتِ عبث کا سماں بدل ڈالو قلم ہنوز رہینِ شکوہ و شان عجم زبانِ سادہ سے طرزِ بیاں بدل ڈالوں رواں …

مزید پڑھیں